تبلیغات
پیروان خط ولایت فقیه پاکستان - دہشتگردوں کے پاس سرنڈر اور مرنے کے علاوہ کوئی تیسرا آپشن نہیں۔ انسپکٹر جنرل ایف سی میجر جنرل شیر افگن
آقای سید ساجد علی نقوی شروع هی سے ایک متحرک ،محنتی ،زحمت کش، اور مومن مرد ہیں.امام خامنه ای

دہشتگردوں کے پاس سرنڈر اور مرنے کے علاوہ کوئی تیسرا آپشن نہیں۔ انسپکٹر جنرل ایف سی میجر جنرل شیر افگن

یکشنبه 11 مرداد 1394 12:11 ب.ظ

لکھا گیا ھے : پیروان ولایت
بیجها گیا: پاکستان ،
میجر جنرل شیرافگن کیجانب سے تفتان میں زائرین کیلئے ہوٹل کا باقاعدہ افتتاح

انسپکٹر جنرل ایف سی میجر جنرل شیر افگن نے کہا ہے کہ بھارت بلوچستان کے راستے پاکستان میں دہشت گردی کی کارروائیاں کررہا ہے۔ بی ایل اے، بی آر اے اور بی ایل ایف کو اسلحہ، کمیونیکیشن اور پیسے انہی سرحدی علاقوں سے دیئے جارہے ہیں۔ دہشتگردوں کے پاس سرنڈر اور مرنے کیلئے علاوہ کوئی تیسرا آپشن نہیں۔ بلوچستان میں دہشتگردی کے خاتمے کیلئے ایف سی کے جوانوں نے بے پناہ قربانیاں دی ہیں۔ اس موقع پر ایم پی اے نوشکی حاجی میر غلام دستگیربادینی، میر کریم نوشیروانی، سابق وفاقی وزیر سردار عمر گورگیج، نیشنل پارٹی کے مرکزی رہنماء سردار آصف شیر جمالدینی، کمانڈنٹ نوشکی ملیشیاء مظہرالحسن، ڈپٹی کمشنر حمید اﷲ ناصر، ڈی پی او نذر جان بلوچ ودیگر بھی موجود تھے۔ اس سے قبل آئی جی ایف سی بذریعہ ہیلی کاپٹر نوشکی پہنچے تو ایف سی کے چاک وچوبند دستے نے انہیں سلامی پیش کی۔ قبائلی عمائدین، عوامی نمائندوں سے خطاب کرتے ہوئے آئی جی ایف سی نے کہا کہ پاکستان کی اہمیت اور حیثیت صرف بلوچستان کی وجہ سے ہے۔ پاکستان کا مستقبل بلوچستان سے وابستہ ہے۔ اﷲ پاک نے اس خطہ کو مالا مال بنا دیا ہے۔ مگر چند عناصر نہیں چاہتے کہ بلوچستان ترقی کریں۔ کالعدم تنظیموں کے سربراہوں کے اپنے بچے اور رشتہ دار بیرون ملک پڑھتے ہیں۔ مگر یہاں وہ عام عوام کو اپنے مقاصد کیلئے استعمال کررہے ہیں اور یہاں کے لوگوں کو ابھی تک خانہ بدوش کی زندگی گزارنے پر مجبور کر دیا ہے۔ فوج اور ایف سی اپنی عوام کے محافظ ہیں اور عوام کے تحفظ کیلئے ہی جوان اپنی جانوں پر کھیل رہی ہیں۔ دہشت گردوں کے خلاف جنگ صرف فوج اور ایف سی کی نہیں بلکہ ہم سب کی ہے۔ ہم سب کی مشترکہ زمہ داری ہے کہ ہم دہشت گردوں کے عزائم ناکام بنانے کے لئے سیکورٹی فورسز کے ساتھ مربوط تعاون کریں اور انہیں اپنے درمیان جگہ نہ دیں۔ ریاست کے خلاف کھڑے ہونے والوں کے لئے صرف مرنے کے کوئی دوسری چوائس نہیں ہے۔
میجر جنرل شیر افگن کا مزید کہنا تھا کہ سانحہ کھڈکوچہ میں معصوم لوگوں کے خون سے ہاتھ رنگنے والے دہشت گردوں کو نہ مارتے تو کیا کرتے۔ کسی دہشتگرد کو مارنے سے ہمیں کوئی خوشی نہیں ہوتی۔ مگر بدقسمتی سے دہشت گردوں نے اپنے لئے کوئی اور آپشن ہی نہیں رکھا ہے۔ چند دہشت گرد پوری قوم کا مقابلہ نہیں کرسکتے ہیں، لوگ جاگ چکے ہیں۔ لوگوں میں شعور بیدار ہوا ہے۔ پنجگور میں جہاں پہلے امن کی صورتحال خراب تھی، ایف سی نے وہاں لوگوں کی حفاظت کی اور تعلیم وصحت کے سہولیات بھی فراہم کررہی ہے۔ ایف سی میں اصلاحات لائی گئی ہیں اور ایف سی کے جوانوں کو چیک پوسٹوں اور دوران آپریشن لوگوں کی عزت نفس اور عورتوں کے تقدس اور حرمت کا خیال رکھنے کی ہدایت کی ہے۔ ایف سی کے چالیس سے زائد سکول ہیں، جہاں بچوں کو اعلٰی اور معیاری تعلیم دی جارہی ہے۔ جبکہ ایف سی کے ہسپتالوں میں بہترین صحت کے سہولیات دی جارہی ہیں۔ ریکوڈک اور سیندک پراجیکٹ سمیت تمام پراجیکٹس پر پہلا حق لوکل لوگوں کا ہوتا ہے۔ اس موقع پر آئی جی ایف سی نے تفتان میں ایف سی کی کاوشوں سے ایک غیرآباد ہوٹل کا تزئین وآرائش کے بعد افتتاح کیا،جسے ایران جانے والے زائرین کے لئے کھول دیا گیا۔ افتتاحی تقریب کے موقع پر آئی جی ایف سی میجر جنرل شیرافگن نے کہا کہ ہوٹل کی فعالیت سے زائرین کو سفری سہولیات مہیا ہوں گی۔



نظرات : نظرات
آخری اپڈیٹ : یکشنبه 11 مرداد 1394 12:15 ب.ظ